Tuesday | 28 March 2017 | 29 Jamadiul-Thani 1438

Fatwa Answer

Question ID: 7 Category: Business Dealings
Ruling about Khula‘ and Fasqh-e-Nikah

Assalamualaikum Warahmatullah 

  1. My friend’s daughter is in lot of pressure and hardship from her husband. He is constantly abusing her mentally and sometimes physically. She wants to get separated. Can she demand for Khula‘?
  2. If yes, what is the ruling about mehr since the husband did not pay a single dime of her mehr at the time of marriage?
  3. Our understanding is that mehr is supposed to be paid at the time of marriage. Is that correct?
  4. What will be the effect if she has already filed in the court for divorce and payment of mehr? 
  5. What is Fasqh-e-Nikah?

Assalamualaikum Warahmatullah

  1. When reconciliation does not remain as an option between the husband and wife and the husband does not issue a divorce voluntarily then the wife has a right to demand for Khula‘ (i.e. to demand for divorce from her husband).
  2. Mehr becomes an obligation upon the husband if the marriage had been consummated or at least true privacy was achieved between the husband and wife. As per the situation described in your question if the marriage has been consummated or the husband and wife were in absolute privacy and the husband has not paid the amount of mehr then the wife can demand for its payment, as long as her demand is unconditional. However if she has agreed to waive her mehr as the condition for acceptance of her demand of Khula‘ then she does not have a right to demand for her mehr.
  3. Mehr is of two kinds:
    1. Mehr-e-Mu‘ajjal i.e. it has to be immediately paid at the time of Nikah
    2. Mehr-e-Moajjal i.e. it can be paid and delayed based upon the husband’s financial situation and capability (Note: Regardless of the type, the mehr is supposed to be paid)
  4. Completing the court related paperwork does not directly and immediately officiate “talaq”, unless the husband has:
    1. Used such wording to issue talaq in the divorce documentation (e.g. I issue divorce to my wife) or
    2. Verbally issues talaq to his wife and in case of verbal talaq it is preferred to do so in the presence of two witnesses
  5. When there is no possible reconciliation between the husband and wife and the husband is not issuing a divorce, then making efforts to convince the husband by involving a third party and navigating the process to the issuance of divorce is termed as “Fasqh-e-Nikah” or invalidation of Nikah.
Question ID: 7 Category: Business Dealings
خلع اور فسخ نکاح کے بارے میں احکامات

 

 

 

السلام علیکم ورحمۃ اللہ ،

 (الف) میرے دوست کی بیٹی اپنے شوہر کی طرف سے کافی دباؤ اور ظلم کا شکار ہے ، وہ اس کو مستقل ذہنی اور کبھی کبھی جسمانی زدوکوب بھی کرتا ہے۔ وہ علحدگی چاہتی ہے۔ کیا وہ خلع کے لئے درخواست دے سکتی ہے؟

 (ب)اگر ہاں تو مہر کے بارے میں کیا حکم ہو گا؟ چونکہ اس کے شوہر نے مہر کی مد میں اب تک اس کو کچھ بھی ادا نہیں کیا۔

 (ج)ہمارے علم کے مطابق مہر شادی کے وقت ہی ادا کر دیا جانا چاہئے تھا۔کیا یہ بات صحیح ہے؟

 (د)کیا لڑکی کے کورٹ سے طلاق اور اپنا مہر حاصل کرنے کے لئے درخواست دائر کرنے کا کوئی اثر طلاق پر پڑے گا؟

 (ہ)فسخ ِ نکاح سے کیا مراد ہے؟

 

 

 

 

السلام علیکم ورحمۃ اللہ ،

 (الف) شوہر بیوی میں (آپس میں) نباہ نہ ہو اور شوہر خود سے طلاق نہ دے تو عورت کو خلع لینے کی اجازت ہے(یعنی شوہر سے طلاق مانگنے کی اجازت ہے)۔

(ب) بعد نکاح میاں بیوی میں صحبت یا خلوت سے مہر لازم ہو جاتا ہے، صورت مسئولہ میں اگر زوجین کے بیچ صحبت یا خلوت ہوئی اور تاحال شوہر نے مہر ادا نہیں کیا تو عورت کو مہر کے مطالبہ کا حق ہے۔ جب کہ اس نے شوہر سے بلا کسی عوض کے طلاق کا مطالبہ کیا ہے۔ اور اگر اس نے مہر معاف کرنے کی شرط پر خلع لی ہے تو پھر اسے مہر مانگنے کا حق نہیں۔

(ج) مہر دو طرح کا ہوتا ہے، ایک جو نکاح کے وقت فورا ًادا کیا جاتا ہے وہ مہر "مُعَجَّل" کہلاتا ہے، دوسرا وہ مہر جو شوہر (حسب سہولت و استطاعت ) تاخیر سے ادا کرتاہے، وہ مہر "مؤجَّل" کہلاتا ہے۔مہر کوئی سا ہو، ادائیگی ضروری ہوتے ہے۔

 (د) کورٹ کی کاغذی کارروائی طلاق واقع ہونے کے لئے کافی نہیں، جب تک شوہر اس میں ایسے کلمات نہ لکھے جو طلاق کے لئے ہوتے ہیں مثلًا"میں نے طلاق دے دی"، یا جب تک اپنی زبان سے ایسے کلمات نہ کہے ۔ مناسب ہے کہ شوہر نے اگر زبانی طلاق دی ہے تو اپنے اس زبانی بیان پر دو آدمیوں کو گواہ بنالے۔

(ہ) میاں بیوی میں نباہ نہ ہو اور شوہر طلاق دینے پر آمادہ نہ ہو تو کسی تیسرے کے ذریعہ شوہر کو طلاق پر آمادہ کر کے میاں بیوی کو علحدہ کروانے کا نام فسخ نکاح ہے۔

فقط واللہ اعلم