Saturday | 04 April 2020 | 10 Shabaan 1441
Gold NisabSilver NisabMahr Fatimi
$4561.31$283.11$707.77

Fatwa Answer

Question ID: 1005 Category: Worship
About Ishraq Salat

Assalamualaikum, 

Is there any difference between Ishraq and Duha? After the sunrise some people wait 10 minutes some 20 minutes, how long you have to wait after sunrise? And the reward of Hajj and Umrah, what does that reward mean?

الجواب وباللہ التوفیق

  • Ishraq is the prayer offered after the sunrise when the sun gets so much brightness that it becomes difficult to have a continuous glance at it.
  • When the sun gets high quite enough and the sunshine becomes intense, the timing of which is stated to be the quarter of the day i.e., 10, 11 a.m., then to pray two or four raka’at is called Salat ud Duha. Its virtue is proven from the Hadith. However, the Ulama have called both Salat the Salat ud Duha. To pray Salat after the sunrise is Ishraq and the Salat a little before the زوال (midday) is called Chasht.
  • One should wait for 15 to 20 minutes after the sunrise for the Ishraq Salat and though the time for the Chasht Salat starts from the Ishraq time however, it is better to pray it at the quarter of the day i.e., exactly between the sunrise and the midday.
  • The virtue of praying Ishraq is that of a Hajj and an Umrah. One of the meanings of this as told by the interpreters of the Hadith is that one is the real reward of the person performing the Hajj and the Umrah which is fixed and determined and one is the over and above and prize reward. Hence, the reward of the Hajj and Umrah on this action though will in reality be equal to original reward of one performing the Hajj and Umrah however, if one in reality performs Hajj or Umrah then the reward for the Ishraq Salat will not be equal to the prize reward he is given with the Hajj and Umrah. Second meaning is that the relationship between the reward of Fajr and Ishraq is the same as it is between the Hajj and Umrah.

( و ) ندب ( أربع فصاعدا في الضحى ) على الصحيح من بعد الطلوع إلى الزوال ووقتها المختار بعد ربع النهار .(رد المحتارباب الوتر والنوافل)

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 1005 Category: Worship
اشراق نماز کے بارے میں

 السلام علیکم

کیا اشراق اور   ضحیٰ نماز میں کوئی فرق ہے؟اشراق پڑھنے کے لیے کچھ لوگ سورج نکلنے کے بعد ۱۰ منٹ انتظار کرتے ہیں اور کچھ ۲۰ منٹ  ہمیں سورج نکلنے کے بعد کتنی دیر انتظار کرنا چاہیئے ،اس پر حج اور  عمرے کا ثواب ملنے کا کیا مطلب ہے؟

 الجواب وباللہ التوفیق 

(۱)اشراق کی نماز وہ ہے جوکہ طلوع آفتاب کے بعد ادا کی جاتی ہے  جب کہ آفتاب میں اتنی تیزی آجائے کہ کچھ دیر اس پر نظر جمانا مشکل ہو۔

(2)جب سورج خوب زیادہ اونچا ہوجائے اوردھوپ تیز ہوجائے جس کا وقت ربع النہار یعنی دس گیا رہ بجے  بیان کیا جاتا ہےتو اس وقت دو رکعت یا چار رکعت پڑھنا صلوة الضحی ہے جس کی فضیلت بھی حدیث سے ثابت ہے۔البتہ بعض علماء نے دونوں کو صلاۃ الضحی کہا ہے۔طلوع آفتاب کے بعد نماز پڑھنا شراق ہے،اور بعد زوال سے کچھ پہلے نمازچاشت کہلاتی ہے۔

(3)اشراق کی نماز کے لئے طلوع شمس کے  ۱۵ سے ۲۰ منٹ کا  انتظار کرنا چاہیے۔اور چاشت کی نمازکا وقت اگرچہ اشراق کے وقت سے شروع ہوجاتا  ہے لیکن بہتر یہ ہے کہ ربع النہار کے بعد یعنی طلوع اور زوال کے ٹھیک بیچ اس کو ادا کیا جائے

(4)اس حدیث کے تحت شارحین نے  جو مطالب بیان فرمائے ہیں ان میں سے ایک مطلب  یہ ہے کہ ایک ہے حج و عمرہ کا اصل ثواب جو کہ مقرر اور متعین ہے  اور ایک ہے زائد اور انعامی ثواب، لہذا مذکورہ عمل پر جو جو حج و عمرہ کا ثواب ہے وہ حقیقی طور پر حج و عمرہ کرنے والے کے اصل ثواب  کے برابرا توہوگا،لیکن اگر کوئی حقیقۃ حج یا عمرہ کرتا ہے تو اس کو حج اور عمرہ کے ساتھ جو انعامی ثواب دیاجاتاہے اس کے برابر  نہ ہوگا۔

دوسرا مطلب یہ  بھی ہے کہ فجر اور اشراق کے ثواب میں وہی نسبت ہے جو نسبت کہ حج و عمرہ کے ثواب میں ہے۔

( و ) ندب ( أربع فصاعدا في الضحى ) على الصحيح من بعد الطلوع إلى الزوال ووقتها المختار بعد ربع النهار .(رد المحتارباب الوتر والنوافل) 

واللہ اعلم بالصواب