Monday | 17 December 2018 | 9 Rabiul-Thani 1440

Fatwa Answer

Question ID: 101 Category: Miscellaneous
Evil or Negative Thoughts

Assalamualaikum Warahmatullah 

I have a habit of getting bad feelings and negative thoughts about Allah Subhanahu Wa Ta‘ala and his Messenger Sallallaho Alyhi Wasallam. However, I do not use my tongue to utter any such statements about the thoughts. This situation persists during salah as well, so much so that I can’t even take a stab at narrating it.

How can I deal with this situation and am I being sinful for such actions of my mind?

Wassalam

 الجواب وباللہ التوفیق

Shaytan whispers such thoughts in one’s mind and one should not focus on them. Just through the occurrence of these suspicions in your heart, you would not become sinful. Since these thoughts are involuntary there is no accountability for them either. When you are performing salah, an easy way of getting rid of such thoughts and whispering, is to focus your attention on the step of salah you are performing and concentrate on the tasbeeh and its meaning, with the rememberance that Allah Subhanahu Wa Ta‘ala is looking at you. When you encounter such thoughs outside of salah, you should read the following:

اعوذ باللہ من الشیطن الرجیم آمنت باللہ ورسولہ

And recite the third kalimah in abundance i.e.:

سبحان اللہ والحمد للہ ولا الہ الا اللہ واللہ اکبر ولا حول ولا قوۃ   الا باللہ العلی العظیم

InshahAllah with the above metioned actions, these thoughts and whispering will decrease.

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 101 Category: Miscellaneous
منفی اور غلط قسم کے خیالات کا آنا

 

 

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

میرے ذہن اور دل میں اللہ تعالی اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے بارے میں غلط خیالات اور وہمات آتے رہتے ہیں۔ باوجود اس کے کہ میں اپنی زبان سے ان خیالات کا اظہار نہیں کرتا، میرا ذہن اس چیز سے بے حد پریشان رہتا ہے۔ نماز میں ان خیالات کا اتنی بہتات ہوتی ہے کہ میں بیان نہیں کر سکتا۔

میں اس مسئلے کا کیسے حل کرو ں اور کیا ان خیالات کے ذریعے میں گناہ گار ہوتا ہوں؟

والسلام

 

 

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

الجواب وہو الموفق للصواب

اس طرح کے خیالات شیاطین کی جانب سے آتےہیں، ان کی طرف توجہ نہ دیں،اورمحض دل میں اس طرح کے وساوس آنے کی وجہ سے آپ گنہگار نہیں ہوں گے۔کیونکہ یہ غیر اختیاری ہیں،اس لئے ان پر مواخذہ بھی نہیں ہے۔جب آپ نماز پڑھیں تو دفعِ وساوس کا آسان طریقہ یہ ہےکہ نماز کا جو رکن آپ ادا کررہے ہیں اس وقت اپنی توجہ اللہ کے استحضار کے ساتھ اس رکن اور اس کی تسبیحات اور ان کے معانیٰ کی طرف مرکوز کریں۔اور خارجِ نماز جب اس طرح کے وساوس آئیں تو اس وقت اعوذ باللہ من الشیطن الرجیم آمنت باللہ ورسولہ پڑھیں،اور کلمۂ تمجید یعنی سبحان اللہ والحمد للہ ولا الہ الا اللہ واللہ اکبر ولا حول ولا قوۃ   الا باللہ العلی العظیم کا ورد کثرت سے کریں۔انشاء اللہ العزیز اس سے وساوس کم ہوجائیں گے۔

فقط واللہ اعلم بالصواب