Monday | 17 December 2018 | 9 Rabiul-Thani 1440

Fatwa Answer

Question ID: 107 Category: Business Dealings
Taking Loan from My 401K to Donate

Assalamualaikum Warahmatullah 

I make contributions to my 401K plan every month and whatever I chip in, my employer matches that amount. Typically if someone takes the money out of their 401K before they reach the age of 59.5, they will have to pay a 10% early withdrawal penalty in addition to the tax which is paid to the government. If someone takes out a loan from that money then they have to pay back it back to the firm with interest in typically 5 years period. 

Since interest is haram in Islam, what should I do if I need to donate to a charity using my 401K money?

Any help would be much appreciated.

JazakAllah 

الجواب وباللہ التوفیق

We are unaware of all the details regarding your 401K account and the reasoning and reality behind you and your employer depositing money in this account. In addition, we are unaware of the areas where your firm invests or the manner in which that money is used by them. However, from one of the points mentioned in your question it is clear that just like “Fix Deposit” accounts in the banks, there is an issue here as well which is impermissible from a Shar‘ai standpoint. Therefore, we recommend you provide further details and ask a question regarding its permissibility or impermissibility.

As far as donating from that account is concerned, if you have any other money from which you can donate, that will be considered preferable. If you do not have any other spare money, then paying through that account implies that you will have to pay interest or the amount of tax which may become unbearable for you. Thereofer, our recommendation is for you to delay your donation at this point and pay it at another suitable time so that you are not involved in any interest based or non-Islamic transaction. Or if you want to pay the donation by taking a loan from someone who you can pay back with ease in future, then that is also an option.

فقط واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 107 Category: Business Dealings
401کے اکاؤنٹ میں سے چندہ دینے کے لئے پیسہ نکالنا

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

میں اپنے ۴۰۱ کے اکاؤنٹ میں ہر مہینے کی تنخواہ کا ایک حصہ جمع کراتا ہوں ، اور جتنی مقدار میں جمع کراتا ہوں اتنا ہی میرا امپلائر بھی اس میں شامل کر دیتا ہے۔ اگر میں اس میں جمع شدہ کل رقم یا اس کاکچھ حصہ ساڑھے انسٹھ سال کی عمر سے قبل نکلواتا ہوں تو مجھے جرمانے کے طور پر اس رقم کا دس فی صد کمپنی کو واپس کرنا پڑے گا۔ مزید یہ کہ اس رقم پر مجھے حکومت کو ٹیکس بھی ادا کرنا ہوگا۔ اگر اس رقم میں سے کچھ رقم ہم قرض کے طور پر کمپنی سے لیتے ہیں تو وہ رقم ہمیں سود کے ساتھ لوٹانا پڑے گی(عام طور پر ۵ سال کے عرصے میں)۔

چونکہ سود اسلام کی تعلیمات کے مطابق حرام ہے، مجھے ایسی صورت میں کیا کرنا چاہئے کہ میں اپنے ۴۰۱ کے اکاؤنٹ میں سے پیسہ چندے کے طور پر دینا چاہوں؟ آپ کی مدد کے لئے بڑا ممنون رہوں گا۔ جزاک اللہ خیرا ۔

 

 

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

الجواب وباللہ التوفیق

۴۰۱ اکاؤنٹ کی تفصیل کا ہمیں علم نہیں،آپ اور آپ کے امپلائر اس میں جو رقم ہر ماہ جمع کرواتے ہیں اس کی حقیقت اور جہ کیا ہے؟اور پھر اس انوسٹ یا جمع کی ہوئی رقم کا کمپنی کس طرح استعمال کرتی ہے ،راس کا مصرف بھی واضح نہیں ہے، اور آپ کی ذکر کردہ بات سے یہ معلوم ہوتا ہےکہ بینکوں میں فکس ڈپازٹ کی طرح یہاں بھی مسئلہ ہے،جو اسلامی اعتبار سے جائز نہیں ہے،اس لئے اس کی تفصیل لکھ کر شرعی اعتبار سے اس کے جواز اور عدم جواز کا مسئلہ معلوم کرلیں۔

رہا اس اکاؤنٹ میں سے چندہ دینے کا مسئلہ تو اگر آپ کے پاس اس کے علاوہ رقم موجود ہوتو اس کے ذریعہ چندہ دیں،اگر رقم موجود نہ ہوتو چونکہ اس صورت میں آپ کو سودی یا نا قابل برداشت ٹیکس ادا کرنا پڑرہا ہے اس لئے اس ارادہ کو ترک کردیں ،بعد میں حسب سہولت دیں،تاکہ کسی قسم کا سودی یا غیر شرعی معاملہ نہ ہو،یا پھر اگر کسی سے قرض لے کر دینا چاہیں اور بعد میں اس کی ادائیگی آپ کے لئے آسان ہوتویہ طریقہ بھی اختیار کیا جاسکتاہے۔

فقط واللہ اعلم بالصواب