Friday | 27 November 2020 | 12 Rabiul-Thani 1442

Fatwa Answer

Question ID: 149 Category: Permissible and Impermissible
Consumption of the Wife's Breast Milk

 

Assalamualaikum Warahmatullah

Is the breast milk produced in a woman right after giving birth to a child permissible for consumption by her husband? I am confused regarding this situation and others have been inquiring me regarding this as well. Please guide me regarding this situation and remove my confusion. What is the ruling according to the Hanafi madhab regarding the situation when the husband does end up consuming her wife’s breast milk.

Walaikumassalam Warahmatullahi Wabarakatuhu

الجواب وباللہ التوفیق

It is considered haram for the husband to consume the wife’s breast milk. If this milk makes its way into the husband’s mouth then he should immediately remove it from his mouth. If someone drank such milk unknowingly or by mistake his action will be considered haram. However, through this action, there will be no effect on the Nikah and she will still be his wife. One should perform firm repentance and if it is probably that milk will come out then refrain from performing any such action through which the milk will make its way to the husband’s throat.

إذا مص الرجل ثدی امرأتہ وشرب لبنہا لم تحرم علیہ أمرأتہ لما قلنا أنہ لارضاع بعد الفصال۔

(فتاویٰ قاضیخان ، علی ہامش الہندیۃ،زکریا ۱/۴۱۷، جدید زکریا ۱/۲۵۰)

مص رجل ثدی زوجتہ لم تحرم الخ۔ (الدرالمختار مع الشامی ، زکریا ۴/۴۲۱، کراچی ۳/۲۲۵)

إذامص الرجل ثدی امرأتہ وشرب لبنہا لم تحرم علیہ امرأتہ۔

(خانیۃ، باب الرضاع، جدید زکریا ۱/۲۵۰، وعلی ہامش الہندیۃ، زکریا۱/۴۱۷، شامی، کراچی ۳/۲۲۵، زکریا ۴/۴۲۱)

فقط واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 149 Category: Permissible and Impermissible
بیوی کا دودھ پینے کا حکم

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ، بچہ کی پیدائش کے بعد عورت کی چھاتی میں آنے والا دودھ کیا اس کے شوہر کیلئے جائز ہوتا ہے اس سلسلہ میں مجھے پریشانی ہے،اور مجھے دوسرے لوگ بھی اس سلسلہ میں سوالات کرتے رہتے ہیں،تو اس سلسلہ میں میری رہنمائی فرمادیں اور میرے کنفیوژن کو دور کردیجئے۔ کہ کیا حنفی مذہب کے مطابق اگر شوہر ایسا دودھ استعمال کرلے تو اس کا کیا حکم ہے ۔

وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ

الجواب وباللہ التوفیق

بیوی کا دودھ شوہر کے لئے حرام ہے،اگر منھ میں کسی طرح آجائے تو اس کو منھ سے نکال دینا چاہیے،اگر کسی نے لا علمی میں یا سہوا پی لیا ہوتویہ اس کا فعل حرام ہے، مگراس سے نکاح پرکوئی اثر نہ پڑیگا، بیوی بدستور نکاح میں باقی رہے گی۔البتہ اس سےتوبہ کی جائے،اور اگردودھ نکلنے کا ظن غالب ہو تو اس طرح کی حرکت ہی نہ کی جائےکہ جس سے بیوی کا دودھ اس کے حلق میں چلاجا ئے۔

إذا مص الرجل ثدی امرأتہ وشرب لبنہا لم تحرم علیہ أمرأتہ لما قلنا أنہ لارضاع بعد الفصال۔

(فتاویٰ قاضیخان ، علی ہامش الہندیۃ،زکریا ۱/۴۱۷، جدید زکریا ۱/۲۵۰)

مص رجل ثدی زوجتہ لم تحرم الخ۔ (الدرالمختار مع الشامی ، زکریا ۴/۴۲۱، کراچی ۳/۲۲۵)

إذامص الرجل ثدی امرأتہ وشرب لبنہا لم تحرم علیہ امرأتہ۔

(خانیۃ، باب الرضاع، جدید زکریا ۱/۲۵۰، وعلی ہامش الہندیۃ، زکریا۱/۴۱۷، شامی، کراچی ۳/۲۲۵، زکریا ۴/۴۲۱)

فقط واللہ اعلم بالصواب