Saturday | 21 July 2018 | 7 Dhul-Qidah 1439

Fatwa Answer

Question ID: 213 Category: Worship
Validity of Wudhu after Changing Baby's Diaper

Assalamualaikum Warahmatullahi Wabarakatuhu

I know that when a person touches the private part, one's state of wudhu is not valid anymore. I am a mother of a 3 months old baby and I want to know what the Islamic teachings say about the validity of one's wudhu upon changing the baby's diper. Is the wudhu still valid after changing the baby's diaper? 

JazakAllahu Khaira

Walaikumassalam Warahmatullahi Wabarakatuhu

الجواب وباللہ التوفیق

The wudhu does not get invalidated by touching the private parts or by changing a baby's diaper. With such wudhu you can perform salah and other acts of worship. However, while changing the diaper if one comes in contact with the najasah (impurity) it will be mandatory to wash its residual from one's hands.  

عن قيس بن طلق عن أبيه قال: قدمنا على نبي الله صلى الله عليه و سلم فجاء رجل كأنه بدوي فقال يا نبي الله ما ترى في مس الرجل ذكره بعدما يتوضأ ؟ فقال صلى الله عليه و سلم " هل هو إلا مضغة منه " أو قال " بضعة منه

(سنن ابی داؤد:کتاب الطہارۃ،۱۸۲)

( وَمَسُّ ذَكَرٍ ) بِالرَّفْعِ عَطْفٌ على الْمَنْفِيِّ أَيْ لَا يَنْقُضُ الْوُضُوءَ مَسُّ الذَّكَرِ وَكَذَا مَسُّ الدُّبُرِ وَالْفَرْجِ مُطْلَقًا

(البحر الرائق:۱؍۴۵)

فقط واللہ اعلم بالصواب

 

Question ID: 213 Category: Worship
بچے کا ڈائیپر تبدیل کرنے سے وضو ٹوٹنے کا حکم

 

 

 السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ  

میرے علم میں ہے کہ اگر انسان اپنی شرمگاہ کو چھو لے تو اس کا وضو ٹوٹ جاتا ہے۔ میں ایک ۳ ماہ کے بچے کی ماں ہوں اور یہ جاننا چاہتی ہوں کہ اسلامی شریعت وضو کی حالت میں بچے کے ڈائپر تبدیل کرنے کے بارے میں کیا کہتی ہے ۔ کیا ڈائپر تبدیل کرنے کے بعد بھی میں وضو کی حالت میں رہوں گی؟

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

الجواب وباللہ التوفیق

شرمگاہ کو چھونے سے وضو نہیں ٹوٹتا،اور نہ بچے کی ڈائپر تبدیل کرنے سے آپ کے وضو پر کوئی فرق پڑے گا۔اسی وضو سے آپ نماز وغیرہ ادا کرسکتی ہیں،ہاں اگر ڈائپر تبدیل کرنے میں نجاست لگ جائے تو اس کو دھونا ضروری ہے۔

عن قيس بن طلق عن أبيه قال: قدمنا على نبي الله صلى الله عليه و سلم فجاء رجل كأنه بدوي فقال يا نبي الله ما ترى في مس الرجل ذكره بعدما يتوضأ ؟ فقال صلى الله عليه و سلم " هل هو إلا مضغة منه " أو قال " بضعة منه

(سنن ابی داؤد:کتاب الطہارۃ،۱۸۲)

( وَمَسُّ ذَكَرٍ ) بِالرَّفْعِ عَطْفٌ على الْمَنْفِيِّ أَيْ لَا يَنْقُضُ الْوُضُوءَ مَسُّ الذَّكَرِ وَكَذَا مَسُّ الدُّبُرِ وَالْفَرْجِ مُطْلَقًا

(البحر الرائق:۱؍۴۵)

فقط واللہ اعلم بالصواب