Wednesday | 20 March 2019 | 13 Rajab 1440

Fatwa Answer

Question ID: 232 Category: Worship
Timing of the Khutbah in Salatul-Eid

Someone told me that before the year 1975, the Khutbah used to be before Salatul-Eid but after that people changed it to make the Khutbah after the Salah. I told them that this has been like this always i.e. the Khutbah of Salatul-Eid is always after Salatul-Eid. Did I tell them the correct way? Please confirm, I will be really thankful to you.

الجواب وباللہ التوفیق

To pray Salatul-Eid before the Khutbah (sermon) and deliver the Khutbah after the Salah is the noble practice of Rasulullah Sallallaho 'Alyhi Wasallam. Furthermore, it has been the noble practice of Hazrat Abu Bakr RaziAllah Ta'ala 'Anhu, Hazrat Umar RaziAllah Ta'ala 'Anhu, Hazrat Usman RaziAllah Ta'ala 'Anhu, and Hazrat Ali RaziAllah Ta'ala 'Anhu. Whoever has told you the statement detailed in your question is incorrect and their information is based on ignorance of the facts.

عن نافع عن ابن عمر قال : كان رسول الله صلى الله عليه و سلم وأبو بكر وعمر رضي الله عنهما يصلون العيدين قبل الخطبة

(صحیح بخاری:کتاب العیدین،۹۲۰)

عن ابن عباس قال : شهدت العيد مع رسول الله صلى الله عليه و سلم وأبي بكر وعمر وعثمان رضي الله عنهم فكاهم كانوا يصلون قبل الخطبةز

(صحیح بخاری:کتاب العیدین،۹۱۹)

كان رسول الله صلى الله عليه و سلم يخرج يوم الفطر والأضحى إلى المصلى فأول شييء يبدأ به الصلاة ثم ينصرف

(صحیح بخاری:کتاب العیدین،۹۱۳)

عن عبد الله بن عمر : أن رسول الله صلى الله عليه و سلم كان يصلي في الأضحى والفطر ثم يخطب بعد الصلاةز

(صحیح بخاری:کتاب العیدین،۹۱۴)

فقط واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 232 Category: Worship
صلاۃ العید میں خطبے کا وقت

ایک صاحب مجھ سے بحث کرتے ہوئے کہنے لگے کہ 1975 سے پہلے عید کا خطبہ نماز سے پہلے ہوتا تھا ، اور اب لوگوں نے اس کو تبدیل کردیا ۔ لوگ پہلے خطبہ دیتے تھے۔ میں نے ان سے یہ کہا کہ شروع سے ہی عید کی نماز پہلے اداکی جاتی ہے اور پھر خطبہ ہوتا ہے، کیا یہ بات صحیح ہے جو میں نے ان سے کہی؟ براہ کرم جواب دیجئے میں بیحد شکر گذار رہوں گا۔

الجواب وباللہ التوفیق

عید کی نماز خطبہ سے پہلے ادا کرنا اور نماز کے بعدخطبہ دینا یہ اللہ کے نبی کا عمل ہے،نیز حضرت ابو بکر،حضرت عمر ،حضرت عثمان اور حضرت علی کا معمول بھی یہی تھا،جس نے آپ سے سوال میں مذکور بات کہی ہے وہ صحیح نہیں ہے،لا علمی پر مبنی ہے۔

عن نافع عن ابن عمر قال : كان رسول الله صلى الله عليه و سلم وأبو بكر وعمر رضي الله عنهما يصلون العيدين قبل الخطبة(صحیح بخاری:کتاب العیدین،۹۲۰)

عن ابن عباس قال : شهدت العيد مع رسول الله صلى الله عليه و سلم وأبي بكر وعمر وعثمان رضي الله عنهم فكاهم كانوا يصلون قبل الخطبةز(صحیح بخاری:کتاب العیدین،۹۱۹)

كان رسول الله صلى الله عليه و سلم يخرج يوم الفطر والأضحى إلى المصلى فأول شييء يبدأ به الصلاة ثم ينصرف(صحیح بخاری:کتاب العیدین،۹۱۳)

عن عبد الله بن عمر : أن رسول الله صلى الله عليه و سلم كان يصلي في الأضحى والفطر ثم يخطب بعد الصلاةز(صحیح بخاری:کتاب العیدین،۹۱۴)

فقط واللہ اعلم بالصواب