Wednesday | 19 June 2019 | 15 Shawaal 1440

Fatwa Answer

Question ID: 235 Category: Worship
Reciting Additional Supplications in Salatul Maghrib Before Going to Sajdah

Assalamo Alaykum Hadhrat: One of the imams recites Allahummahdina Feeman Hadaytah....(the complte dua) and some Qur'anic supplications with hands raised in the last raka'h of the Maghrib salah (i.e. in qawma) just  before going to sajdah.  What should a Hanafi should do in this situation.

الجواب وباللہ التوفیق

This process is considered as "Qunoot-e-Nazilah". According to an authentic narration, it shall be performed without rafa' yadain (i.e. the action of raising one hands towards ones face). According to Fiqah al-Hanafi it is specific with only Salatul-Fajr and should not be performed in any other salah. Praying salah in this manner does not invalidate the salah, however if the Imam is Hanafi then he should read it in Salatul-Fajr, if needed and according to the method described in Fiqah al-Hanafi. If however, the Imam is Shaf’ai and the muqtadi (the follower) is Hanafi (as it is prevalent with the Imams of the Harmain), then the muqtadi should remain standing in his positione while saying aameen in a low voice without raising hands (as one does during du'a).

عن أنس بن مالک -رضي اﷲ عنہما- أن رسول اﷲ صلی اﷲ علیہ وسلم قنت شہرا بعد الرکوع في صلاۃ الفجر یدعو علی بني عصیۃ۔

(صحیح مسلم، باب استحباب القنوت في جمیع الصلاۃ إذا نزلت بالمسلمین نازلۃ، رقم: ۶۷۷)

إن قنوت النازلۃ عندنا مختص بصلاۃ الفجر، دون غیرہا من الصلوات الجہریۃ والسریۃ۔

(شامي، کتاب الصلاۃ، باب الوتر والنوافل، زکریا ۲/ ۴۹۹)

وإذا اقتدی بمن یقنت في الفجر کشافعي قام معہ حال قنوتہ ساکتا في الأظہر … ویرسل یدیہ في جنبہ؛ لأنہ ذکر لیس مسنونا۔

(مراقي الفلاح مع الطحطاوي ۲۱۰-۲۱۱)

ولو قنت المقتدي أو أمّن لا یرفع صوتہ بالاتفاق؛ لئلا یشوش غیرہ، ولأن الأصل في الدعاء الإخفاء علی ما تقدم۔

(حلبي کبیر ۴۲۴)

فقط واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 235 Category: Worship
نماز مغرب میں سجدے میں جانے سے قبل دعاؤں کے پڑھنے کی حیثیت

 

 

السلام علیکم حضرت ایک امام ہیں جو مغرب کی آخری رکعت میں قیام کے دوران ، سجدے میں جانے سے قبل، کچھ دعائیں بآواز بلند ، ہاتھ اٹھا کر پڑھتے ہیں، احناف کو ایسے امام کے پیچھے نماز پڑھتے ہوئے کیا کرنا چاہئے؟

 

 

الجواب وباللہ التوفیق

یہ قنوت نازلہ ہے،صحیح قول کے مطابق اس میں رفع یدین کا ترک ہے،اور احناف کے نزدیک نماز ِفجر کے ساتھ یہ مخصوص ہے،دیگر نمازوں میں درست نہیں ہے، اس طریقہ پر پڑھنے سے نماز تو ادا ہوجاتی ہے۔لیکن اگر امام حنفی ہیں تو انہیں چاہئے کہ احناف کے طریقہ کے مطابق وقت ضرورت نماز فجر میں اس کو پڑھیں۔

اور اگر امام شافعی ہواور مقتدی حنفی ہو جیسا کہ حرمین شریفین کے ائمہ کا معمول ہے، تو وہ حنفی مقتدی امام کے دعاء قنوت پڑھنے کے دوران اپنی حالت پر کھڑا رہے اور سراً آمین کہتا رہے، اوردعا کی طرح ہاتھ نہ اٹھائے۔

عن أنس بن مالک -رضي اﷲ عنہما- أن رسول اﷲ صلی اﷲ علیہ وسلم قنت شہرا بعد الرکوع في صلاۃ الفجر یدعو علی بني عصیۃ۔

(صحیح مسلم، باب استحباب القنوت في جمیع الصلاۃ إذا نزلت بالمسلمین نازلۃ، رقم: ۶۷۷)

إن قنوت النازلۃ عندنا مختص بصلاۃ الفجر، دون غیرہا من الصلوات الجہریۃ والسریۃ۔

(شامي، کتاب الصلاۃ، باب الوتر والنوافل، زکریا ۲/ ۴۹۹)

وإذا اقتدی بمن یقنت في الفجر کشافعي قام معہ حال قنوتہ ساکتا في الأظہر … ویرسل یدیہ في جنبہ؛ لأنہ ذکر لیس مسنونا۔

(مراقي الفلاح مع الطحطاوي ۲۱۰-۲۱۱)

ولو قنت المقتدي أو أمّن لا یرفع صوتہ بالاتفاق؛ لئلا یشوش غیرہ، ولأن الأصل في الدعاء الإخفاء علی ما تقدم۔

(حلبي کبیر ۴۲۴)

فقط واللہ اعلم بالصواب