Wednesday | 21 November 2018 | 13 Rabiul-Awal 1440

Fatwa Answer

Question ID: 242 Category: Social Dealings
Selling Yoga Pants or Leggings

AsalaamuAlaikum

What is the ruling in Islam on selling tight clothing like yoga pants or leggings for women or men as a business? In these types of clothes, each and every part of the body is shown clearly with its specific shape etc. Will running such a business be permissible?

Wasalaam

الجواب وباللہ التوفیق

Although wearing such clothing is considered a sin and an act of lewdness but the business of selling such clothing is considered makrooh due to being an act of cooperation in the sin. As the cost for buying the clothe and having it stitched into these pants or leggings, in itself is not an abominable act, therefore, such an income will not be considered haram rather it will be considered makrooh. Therefore, it will be better to refrain from getting involved in such a business.

فإذا ثبت کراہۃ لبسہا للتختم ثبت کراہۃ بیعہا وصیغہا، لما فیہ من الإعانۃ علی ما لا یجوز، وکل ما أدّی إلی ما لا یجوز لا یجوز، وتمامہ في شرح الوہبانیۃ۔

(الدر المختار، کتاب الحظر والإباحۃ / فصل في اللبس ۶؍۳۶۰ کراچی)

فقط واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 242 Category: Social Dealings
یوگا پینٹس یا دیگر تنگ کپڑے بیچنے کا کاروبار

السلام علیکم

اسلام میں ایسے کپڑے بیچنے کے بارے میں کیا حکم ہے جو بہت ہی تنگ ہوں (مثلا یوگا پینٹس یا لیگنگز)، چاہے وہ مردوں کے لئے ہو یا عورتوں کے لئے؟ ان ملبوسات میں جسم کا ایک ایک حصہ، اپنی اصل ساخت کے ساتھ، واضح طور پر نظر آتا ہے۔کیا اس کا کاروبار جائز ہو گا؟

والسلام

 

الجواب وباللہ التوفیق

ایسے لباس پہننا اگرچہ بے حیائی اور باعث گناہ ہے،لیکن ایسے کپڑوں کی تجارت تعاون علی الاثم کی وجہ سے مکروہ ہے،چونکہ اس میں سلوائی کی اجرت اور کپڑے کی قیمت فی نفسہ مذموم نہیں ہے،اس لئے ایسی آمدنی حرام تو نہیں ہوگی مکروہ ہوگی،اس لئے اس سے احتیاط کرنا بہتر ہوگا۔

فإذا ثبت کراہۃ لبسہا للتختم ثبت کراہۃ بیعہا وصیغہا، لما فیہ من الإعانۃ علی ما لا یجوز، وکل ما أدّی إلی ما لا یجوز لا یجوز، وتمامہ في شرح الوہبانیۃ۔

(الدر المختار، کتاب الحظر والإباحۃ / فصل في اللبس ۶؍۳۶۰ کراچی)

فقط واللہ اعلم بالصواب