Sunday | 25 August 2019 | 24 Dhul-Hajj 1440

Fatwa Answer

Question ID: 344 Category: Miscellaneous
Divorce issue, please reply fast

I need help regarding my divorce issue. I’m badly stuck and have a very short time to fix this issue since my in-laws are badly forcing my husband to file a divorce in court asap. So I really need a fatwa asap so that if there’s something left in our marriage then I can save it. My husband is very nice but for no reason, my in-laws are so against me and they were forcing my husband to leave me else they’ll leave him. So he was so pressurized that he was actually seeing a Psychiatrist and getting help from counselors all this time. Please, please reply me fast, I really need a fatwa soon. 

I talked to Mufti Saheb on the phone he said that he could send me the fatwa fast. So please try to do it as fast as possible and please send separate fatwas for all three questions on three different pages to avoid confusion: 


My first question is my husband and I had an argument in which my husband issued 2 divorces at once. He used the words, “I divorce you”. Is issuance of such divorce at a time counts as one divorce or full irrevocable divorce??? 

and the second question is I am sure I heard that in Hanafi view or even in all the other views it's same that if a man issues divorce in extreme anger then it doesn’t count at all? My husband who never yells shouts or gets mad about anything, during an argument he was so extremely out of control that he was trying to get out of the house. I got super upset so I forced him and literally held his hand and pulled him inside the house and he got so mad. He started yelling and shouting, then he was trying to avoid me but I kept on asking him questions, so he got so mad, he got so out of control, and he started saying things which he never said in his life and in that anger he said, "I divorce you". Literally, I put my whole hand in his mouth to make him shut. And after that, he was so blank as nothing happened and he was so out that he had no idea what he just said or did. He had no intention of saying a divorce word. He was soo extremely mad. It was a level of insanity. He had no idea what he was saying or doing. So in extreme anger, saying divorce one or two times,  does it count at all? 

My third question is if a husband issues 2 divorces at once and then the wife goes to her parents' house and they don’t make up (no Rujo' or no intercourse) at all during the iddat period, can he issue another divorce or not until they make up (do Rujo')? 

الجواب وباللہ التوفیق

If the husband, in one utterance, issues one Divorce, or issues two Divorces, or issues three divorces, all of them take effect. Here as many Divorces would take effect as many times the husband issues Divorce. If he issued two Divorces then two would take effect, and if he issued three then three would take effect. Your statement that the Divorce issued in anger doesn’t take effect, is wrong; the Divorce is given only in anger and displeasure, not in the condition of happiness.  

As the Talaaq-e-Raji’ took effect on you (you two could do Rujo’, re-establish married relationship) therefore, if the husband wants to do Rujo’ within the ‘Iddat period then he can do Rujo’ and you will return in his Nikah. If the husband has not done Rujo’ within the ‘Iddat period then after the passage of the ‘Iddat period Talaaq-e-Bain will take effect. After that, if you two like to live again a married life together then a new Nikah with a new Mehr will be compulsory.   

As the husband has given you two Divorces, therefore, he still has the right of the third divorce. If he unfortunately issues the third divorce then you will forever become Haraam on him.

The issue of the two divorces to take effect will only be valid if the husband was in his senses when he issued two divorces and he knows what is he saying and what is he doing. But if he gets into so much anger that he loses his senses and actually he is not aware as to what is he saying then the divorce doesn’t take effect. In this scenario, it will be appropriate if the husband directly contacts any Aalim Saheb or Mufti Saheb.

الطَّلَاقُ مَرَّتَانِ فَإِمْسَاكٌ بِمَعْرُوفٍ أَوْ تَسْرِيحٌ بِإِحْسَانٍ وَلَا يَحِلُّ لَكُمْ أَنْ تَأْخُذُوا مِمَّا آتَيْتُمُوهُنَّ شَيْئًا إِلَّا أَنْ يَخَافَا أَلَّا يُقِيمَا حُدُودَ اللَّهِ فَإِنْ خِفْتُمْ أَلَّا يُقِيمَا حُدُودَ اللَّهِ فَلَا جُنَاحَ عَلَيْهِمَا فِيمَا افْتَدَتْ بِهِ تِلْكَ حُدُودُ اللَّهِ فَلَا تَعْتَدُوهَا وَمَنْ يَتَعَدَّ حُدُودَ اللَّهِ فَأُولَئِكَ هُمُ الظَّالِمُونَ ۔ فَإِنْ طَلَّقَهَا فَلَا تَحِلُّ لَهُ مِنْ بَعْدُ حَتَّى تَنْكِحَ زَوْجًا غَيْرَهُ فَإِنْ طَلَّقَهَا فَلَا جُنَاحَ عَلَيْهِمَا أَنْ يَتَرَاجَعَا إِنْ ظَنَّا أَنْ يُقِيمَا حُدُودَ اللَّهِ وَتِلْكَ حُدُودُ اللَّهِ يُبَيِّنُهَا لِقَوْمٍ يَعْلَمُونَ (البقرۃ: ۲۲۹ تا ۲۳۰)

ویقع طلاق من غضب خلافا لابن القیم و ھذا الموقف عندنا۔ (شامي ۴؍۴۵۲ زکریا)

وسئل نظما فیمن طلق زوجتہ ثلاثا في مجلس القاضی وہو مغتاظ مدہوش، فأجاب نظما أیضا بأن الدہش من أقسام الجنون فلا یقع، وإذا کان یعتادہ بأن عرف منہ الدہش مرۃ یصدق بلا برہان … الثاني: أن یبلغ النہایۃ فلا یعلم ما یقول ولا یریدہ، فہذا لاریب أنہ لاینفذ شيء من أقوالہ۔ (شامي ۴؍۴۵۲ زکریا)

واللہ اعلم بالصواب

 

Question ID: 344 Category: Miscellaneous
طلاق کا مسئلہ، برائے مہربانی جلدی جواب دیجیے

 

مجھے طلاق کے مسئلے میں مدد چاہیئے ، میں بری طرح پھنسی ہوئی ہوں، اور میرے پاس بہت ہی تھوڑا وقت ہے اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے، میں نے مفتی صاحب سے فون پر بات کی تھی اور انہوں نے کہا تھا کہ وہ بہت تیزی سے فتویٰ بھیج دیں گے، میرے تین سوال ہیں:

۱)بحث مباحثے میں میرے خاوند نے ایک ہی وقت میں مجھے دو طلاقیں دے دیں، میرا سوال یہ ہے کہ ایک وقت میں دو طلاقیں دینا ایک قراردی جاتی ہے یا یہ پوری طلاق بن جاتی ہے جو  واپس نہیں لی جاسکتی؟

۲)مجھے پورا یقین ہے کہ میں نے سنا کہ حنفی  مسلک میں بلکہ اور دوسرے مسلک میں بھی یہی ہے کہ اگر ایک مرد شدید غصہ میں طلاق دیتا ہے تو وہ واقع نہیں ہوتی؟ میرا خاوند شدید غصے میں آکر گھر سے باہر جارہا تھا لیکن میں بھی بہت ہی غصے میں تھی، میں نے اس کاہاتھ پکڑ کر اسے زبردستی گھر کے اندر کھینچا، اس سے وہ اور غصے میں آگیا اور چیخنے چلانے لگا، پھر وہ مجھے سے منہ موڑ کر جانا چاہ رہا تھا، لیکن میں اس سے سوال پوچھتی رہی، جس سے وہ اتنا غصہ میں آگیا اور قابو سے باہر ہوگیا اور ایسی  باتیں بولنے لگا جو اس سے زندگی میں کبھی نہیں بولیں اور اس غصہ میں اس نے کہا کہ میں تمہیں طلاق دیتا ہوں، تو ایسے خاموش کرنے کے لیے میں نے اپنا  پورا ہاتھ اس کے منہ میں گھسا دیا، اس کے بعد وہ اپنا خالی الذہن ہوگیا  جیسے کچھ ہوا ہی نہیں اور وہ ایسا قابو سے باہر تھا کہ اسے کچھ اندازہ نہیں تھا کہ اس نے کیا کہا اور کیا کہا۔ا س کی کوئی نیت نہیں تھی طلاق کا لفظ بولنے کی، وہ اتنا شدید غصے میں تھا کہ جیسے پاگل پن کی طرح، اس کو کچھ ہوش نہیں تھا کہ وہ کیا کررہا ہے اور کیا کہہ رہا ہےتو اس حالت میں ایک یا دو دفعہ طلاق کہا کیا یہ واقعی واقع ہوجاتی ہیں؟

۳)اگر خاوند دو دفعہ طلاق دیتا ہے ایک ہی دفعہ میں، اس کے بعد بیوی  اپنے والدین کے گھر چلی جاتی ہے اور میاں بیوی رجوع یا  مباشرت نہیں کرتے اس عدت کے زمانے میں، کیا وہ ایک اور طلاق دے سکتا ہے یا نہیں جب تک کہ وہ مل نہیں لیتے؟

برائے مہربانی ان تینوں سوالوں کا الگ الگ ،صفحوں پر جواب دیجئے، میرے سسرال والے بری طرح میرے خاوند کو مجبور کررہے ہیں کہ وہ عدالت میں طلاق کے لئے فائل کردے، برائے مہربانی بہت جلدی فتویٰ دیجئے تاکہ میری شادی میں اگر کچھ بچا ہے تو میں اسے بچانے کے لئے کوئی اقدام کروں۔

 

الجواب وباللہ التوفیق

شوہر ایک ساتھ ایک طلاق دے یا دو طلاق  دے یا تین طلاق دےیدے تو سب واقع  ہوجاتی ہیں،یہاں شوہر نے جتنی مرتبہ طلاق دی ہے اتنی طلاقیں واقع ہوں گی،اگر دو دی ہوں تو دو واقع ہوں گی،اور اگر تین دی ہوں تو تین واقع ہوں گی،آپ کا کہنا کہ غصہ میں دی ہوئی طلاق واقع نہیں ہوتی وہ غلط ہے،طلاق غصہ اور ناراضگی  ہی میں دی جاتی ہے،خوشی کی حالت میں نہیں۔

چونکہ آپ پر طلاق رجعی واقع ہوئی ہے اس لئے شوہر عدت کے اندر رجوع کرنا چاہے تو رجوع کرسکتا ہے،اور آپ دوبارہ ان کے نکاح میں واپس چلی جائیں گی۔

اگر شوہر نے عدت کے اندر رجوع نہیں کیا ہے تو آپ پر عدت گزرنے کے بعد طلاق بائن واقع ہوگی اگر آپ دونوں پھر سے باہم ازدواجی زندگی گزارنا چاہیں تو جدید نکاح مہر جدید کے ساتھ کرنا ضروری ہے۔

چونکہ شوہر نےآپ کو دو طلاقیں دی ہیں اس لئے ابھی انہیں تیسری کا اختیار  ہے۔اگر سوء اتفاق کہ وہ تیسری طلاق دیں تو آپ ان پر ہمیشہ کے لئے حرام ہوجائیں گی۔

یہ دو طلاق واقع ہونے کا مسئلہ اس وقت ہے جب شوہر ہوش حواس میں ہو اور اسے پتہ ہوکہ وہ کیا کہہ رہاہے  اور کیا کررہا ہے،لیکن اگر وہ اتنا زیادہ غصہ میں آجائے کہ ہوش حواس باقی نہ رہیں اور اسے واقعۃ  اسے پتہ ہی نہیں کہ وہ کیا کہہ رہا ہے  تو پھر طلاق واقع نہیں ہوتی،لیکن اس سلسلہ میں شوہر کسی مفتی صاحب یا عالم صاحب  سےبراہ  راست رابطہ کرلیں تو مناسب رہے گا۔

الطَّلَاقُ مَرَّتَانِ فَإِمْسَاكٌ بِمَعْرُوفٍ أَوْ تَسْرِيحٌ بِإِحْسَانٍ وَلَا يَحِلُّ لَكُمْ أَنْ تَأْخُذُوا مِمَّا آتَيْتُمُوهُنَّ شَيْئًا إِلَّا أَنْ يَخَافَا أَلَّا يُقِيمَا حُدُودَ اللَّهِ فَإِنْ خِفْتُمْ أَلَّا يُقِيمَا حُدُودَ اللَّهِ فَلَا جُنَاحَ عَلَيْهِمَا فِيمَا افْتَدَتْ بِهِ تِلْكَ حُدُودُ اللَّهِ فَلَا تَعْتَدُوهَا وَمَنْ يَتَعَدَّ حُدُودَ اللَّهِ فَأُولَئِكَ هُمُ الظَّالِمُونَ ۔ فَإِنْ طَلَّقَهَا فَلَا تَحِلُّ لَهُ مِنْ بَعْدُ حَتَّى تَنْكِحَ زَوْجًا غَيْرَهُ فَإِنْ طَلَّقَهَا فَلَا جُنَاحَ عَلَيْهِمَا أَنْ يَتَرَاجَعَا إِنْ ظَنَّا أَنْ يُقِيمَا حُدُودَ اللَّهِ وَتِلْكَ حُدُودُ اللَّهِ يُبَيِّنُهَا لِقَوْمٍ يَعْلَمُونَ (البقرۃ: ۲۲۹ تا ۲۳۰)

ویقع طلاق من غضب خلافا لابن القیم و ھذا الموقف عندنا۔ (شامي ۴؍۴۵۲ زکریا)

وسئل نظما فیمن طلق زوجتہ ثلاثا في مجلس القاضی وہو مغتاظ مدہوش، فأجاب نظما أیضا بأن الدہش من أقسام الجنون فلا یقع، وإذا کان یعتادہ بأن عرف منہ الدہش مرۃ یصدق بلا برہان … الثاني: أن یبلغ النہایۃ فلا یعلم ما یقول ولا یریدہ، فہذا لاریب أنہ لاینفذ شيء من أقوالہ۔ (شامي ۴؍۴۵۲ زکریا)

واللہ اعلم بالصواب