Thursday | 19 September 2019 | 19 Muharram 1441

Fatwa Answer

Question ID: 489 Category: Miscellaneous
Conception about wealth and child birth

Assalamualaikum,

I have heard sicne my childhood that children are in men's detiny and wealth is in women's destiny. Please advise if this is correct according to Quran and Sunnah with reference please. 

Another question, if this is correct, then please advise did Allaah Ta'alaa not write any kind of wealth or rizq in men's destiny or the other way arround did Allaah Ta'alaa not write children in women's destiny. Please advice.

Jazakallah

الجواب وباللہ التوفیق

Having riches or children is all from Allaah Rabbul Izzat, however, sometimes having Nikah also becomes source of riches and birth of girls is also source of goodness and blessing. But this is not a definite rule. It’s Allaah Ta’alaa whosoever He wishes He gives children and whosoever He wishes He does not. Whosoever He wishes He blesses with wealth and whosoever He wishes He deprives from it. Often times there is financial constraint in the presence of a woman. Similarly Allaah Ta’alaa deprives many a men from having children. Therefore, the real thing is the will and wish of Allaah Ta’alaa and the fate from Him and only Allaah knows better.

Hakim ul Umaat Hazrat Thanwi R.A. has written in the Tafseer of the Aayaat ووجدک عائلاً فأغنی and ان یکونوا فقراء یغنہم اللہ that “If those people would be poor then Allaah Ta’alaa (if He wishes) will make them غنی (Ghani) with His فضل (Fadl). (Hence, neither one should consider not having غنا Ghina a reason not to have the Nikah nor he should consider Nikah to be an obstacle in having غنا Ghina. It depends on the wish and will of Allaah Ta’alaa. If the will and wish of Allaah Ta’alaa is to have poverty a person will have poverty though he has not done Nikah. If the wish and will of Allaah Ta’alaa is to have غنا Ghina a person will have غنا Ghina though he has not done Nikah. So why should a person be attentive towards such superstitions). And Allaah Ta’alaa is of great abundance (whosoever He wishes he may make him غنی Ghani).

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 489 Category: Miscellaneous
کیا مرد سے اولاد اور عورت سے دولت ملتی ہے؟

السلام علیکم 

 میں نے بچپن سے سنا ہے کہ بچے مرد کی تقدیر سے ہیں اور دولت عورت کی۔ برائے مہربانی قرآن اور سنت کے حوالے سے بتائیے کہ کیا یہ صحیح ہے؟  دوسرا سوال یہ ہے کہ اگر یہ صحیح ہے تو کیا اللہ نے کسی قسم کا رزق اور دولت مرد کی تقدیر  میں نہیں لکھا ہے اور عورت کی تقدیر میں بچے نہیں لکھے ہیں ۔ جزاک اللہ

الجواب وباللہ التوفیق

اولاد کا ہونا یا مالداری کا ہونا یہ سب اللہ رب العزت کی طرف سے ہے؛ البتہ بسا اوقات نکاح بھی مالداری کا سبب بن جاتا ہے۔اور لڑکیوں کی پیدائش بھی باعث خیر  وبرکت ہے، لیکن یہ قاعدہ کلیہ نہیں ہے،حق تعالیٰ وہ جس کو چاہیں اولاد دیں ،اور جس کو چاہیں اولاد نہ دیں،جس کو چاہیں ،مال دیں اور جس کو چاہیں اس سے محروم رکھیں۔بسااوقات عورت کے ہوتے ہوئے بھی تنگی ہوتی ہے،ایسے ہی بہت سےمردوں کو اللہ پاک اولاد سے بھی محروم رکھتے ہیں۔اس لئے اصل چیز مشیتِ الٰہی اور تقدیر الٰہی ہے۔اور وہ اللہ ہی بہتر جانتے ہیں۔

حکیم الامت حضرت تھانویؒ  نے ان آیات :  (ووجدک عائلاً فأغنی“ اوران یکونوا فقراء یغنہم اللہ) کی تفسیر کرتے ہوئے تحریر فرماتے ہیں: اگر وہ لوگ مفلس ہوں گے تو خدا تعالیٰ (اگر چاہے گا) ان کو اپنے فضل سے غنی کردے گا (پس نہ عدمِ غنا کو مانع نکاح سمجھیں اور نہ نکاح کو مانع غنا اس کا مدار مشیت پر ہے اگر فقر کے ساتھ مشیت متعلق ہو جائے توباوجود نکاح نہ ہونے کے بھی ہو جائے گا اور اگر غنا کے ساتھ مشیت متعلق ہو جائے تو باوجود نکاح نہ ہونے کے بھی ہوگا پس ایسے ارتباطات وہمیہ پر کیوں نظر کی جائے) اور اللہ تعالیٰ وسعت والا ہے (جس کو چاہے غنی کردے)

واللہ اعلم بالصواب