Monday | 30 March 2020 | 5 Shabaan 1441
Gold NisabSilver NisabMahr Fatimi
$4559.06$274.25$685.62

Fatwa Answer

Question ID: 969 Category: Social Dealings
Is embezzlement (khayanat) permissible?

Assalaamualaikum,

The issue is that I have a loan on a piece of property in Pakistan. I have been sending money to my parents to pay off the loan on the property. Unfortunately, my parents pay some amount of loan and some they don't. Now the issue remains that my loan still remains and parents keep asking for money to pay off the loan. This seems to be a never ending cycle. Furthermore, both parents are constantly asking for monthly expenses in sepereate bank accounts even though they are wealthy enough to manage their own expenses. Not sure what to do. Please advise.

الجواب وباللہ التوفیق

One should consider it to be his auspiciousness, fortune, and storage for his life hereafter as much of his wealth is spent by one’s parents. If the parents, despite their affluence demand more than their needs and you would spend on them according to your capacity then you will not have sin for any deficiency in fulfilling their demand. Nevertheless, you should take care of strengthening the bonds of kinship and kind treatment to your best. As far as the payment of loan is concerned you should contact the lender directly or through a third person to pay off your loan.  

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 969 Category: Social Dealings
خیانت جائز ہے؟

مجھے پاکستان میں ایک جائیداد کے لیے قرض ادا کرنا ہے۔ میں اپنے والدین کو یہ قرض ادا کرنے  کیلئے رقم بھیجتا رہا ہوں، بدقسمتی سے میرے والدین نے اس میں سے کچھ رقم قرض ادا کرنے میں استعمال کی اور کچھ نہیں۔ اب صورت حال یہ ہے کہ قرض ابھی بھی باقی ہے اور میرے والدین مجھ سے قرض ادا کرنے کے لیے رقم مانگتے رہتے ہیں، یہ کبھی نہ ختم ہونے والا سلسلہ بن گیا ہے ، اس کے علاوہ دونوں والدین مستقل مطالبہ کرتے ہیں کہ میں ان دونوں  کو الگ الگ اکاؤنٹ میں خرچہ  کی رقم جمع بھیجتا رہوں حالانکہ وہ دونوں اتنے امیر ہیں کہ اپنا  خرچہ خود اٹھا سکتے ہیں، سمجھ نہیں آتا کہ میں کیا کروں۔ برائے مہربانی رہنمائی فرمائیے۔

 الجواب وباللہ التوفیق

اپنا جتنا مال والدین کیلئے لگے اُسے سعادت و خوش بختی اور ذخیر ہ آخیرت سمجھنا چاہیے اگر والدین خوشحال ہونے کے باوجود ان کی ضرورت سے زائد مطالبہ کریں اور آپ اپنی وسعت کے مطابق ان پر خرچ کریں  تو مطالبہ میں کمی ہونے پر آپ گناہ گار نہیں ہوں گے ۔ تاہم صلہ رحمی اور حسنِ سلوک کا بھرپور لحاظ رکھا جائے۔

رہا قرض کا مسئلہ تو والدین کے علاوہ آپ براہ راست قرض خواہ سے یا کسی تیسرے شخص سے رابطہ کرکے قرض ادا کرلیں۔

واللہ اعلم بالصواب