Sunday | 23 February 2020 | 29 Jamadiul-Thani 1441
Gold NisabSilver NisabMahr Fatimi
$4620.94$363.23$908.09

Fatwa Answer

Question ID: 970 Category: Beliefs
Is it shirk?

Assalamualaikum,

I am married for the last 4 years to an Indian Muslim. I am from Pakistan.  My concern is my husband doesn't offer his Namaz at all. In 4 years he only prayed 4 times that was Eid prayer. Secondly whenever he needs some help or is in trouble he always asks from Ghareeb Nawaz. I mean he seeks Dua from Ghareeb Nawaz. Like he says that his problem will be solved by Ghareeb Nawaz. Is it shirk ? 

And what is the ruling for me if my husband is Mushrik? I don't feel comfortable with him in this way.

الجواب وباللہ التوفیق

Seeking help from someone other than Allaah Ta’alaa while seeking help should be particular with Allaah Ta’alaa only, e.g., seeking help from someone and asking one’s needs considering him to be in total control or with the final authority or fulfiller of needs or that he listens if he is called upon, and he comes to help, having such belief and seeking help is شرک (ascribing partners) and Haraam. The Nikah with such a person also breaks. Ask him about his beliefs and then again ask for the Fatwa.

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 970 Category: Beliefs
کیا یہ شرک ہے؟

 

میرے خاوند نماز نہیں پڑھتے ہیں،چار سالوں میں انہوں نے صرف عید کی چار نمازیں پڑھی  ہیں۔ دوسرے جب بھی انہیں کوئی مشکل پیش آتی ہے یا مدد چاہیے ہوتی ہے تو وہ ہمیشہ غریب نواز سے مانگتے ہیں، غریب نواز سے دعا کرتے ہیں وہ  کہتے ہیں کہ ان کا مسئلہ غریب نواز سے حل ہوگا۔ کیا یہ شرک ہے؟ اگر میرے خاوند مشرک ہیں تو میرے لیے اس میں کیا حکم ہے؟ مجھے اس طرح ان کے ساتھ رہنا اچھا نہیں لگتا۔

 

 

 الجواب وباللہ التوفیق

جو استعانت اللہ تعالیٰ کے ساتھ مخصوص ہے وہ غیر اللہ سے طلب کرنا  جیسے کسی کو قادر مطلق  اور مختار مطلق اور حاجت روا یا جس جگہ سے ان کو پکارا جائے  وہ ان کو سنتے ہیں  اور  مدد کو پہنچتے ہیں  سمجھ کر ان سے مدد طلب کرنا اور اپنی حاجت مانگنا، اس طرح کا عقیدہ اور استعانت شرک اور حرام ہے ،اور ایسے شخص سے نکاح بھی ٹوٹ جاتا ہے ،ان کا عقیدہ معلوم کرکے دوبارہ  سوال کرلیں ۔

واللہ اعلم بالصواب