Saturday | 04 April 2020 | 10 Shabaan 1441
Gold NisabSilver NisabMahr Fatimi
$4561.31$283.11$707.77

Fatwa Answer

Question ID: 977 Category: Social Dealings
Minimum amount of Haq-e-Mehr

Assalamualaikum,

Can you please let me know what is the minimum amount of Mehr in current era? I was told that it has to be as low as possible per Sunnah. Also if the groom decides to have a higher Mehr amount, is that allowed per Shahriah? If it is allowed, is there a limit on high the Mehr amount can be?

Jazakallah

الجواب وباللہ التوفیق

While fixing the Mehr, one should consider both the financial capacity of the husband and the family status of the woman. Neither the Mehr should be fixed so low that the woman’s family feels disgrace nor it be decided so high that the payment becomes difficult for the husband. Appropriate Mehr should be fixed with mutual consultation. The Mehr of the daughters of the Nabi SAW and most his Mubarak wives is told to be 500 Dirham silver, which is now-a-days called Mehr-e-Fatimi. In view of current weights it comes out to be one kilo, five hundred thirty one gram, and nine hundred milligrams silver. The least amount of Mehr is ten Dirham silver. In view of current weights it comes out to be thirty grams and six hundred eighteen milligrams silver. If there is no difficulty for the husband to pay then bigger amount of Mehr can also be fixed just as Nijashi had paid four thousand Dirham Mehr  to Hazrat Umme Habibah R.A. on behalf of Nabid S.A.W. and Hazrat Umar R.A. had fixed forty thousand Dirham Mehr for Hazrat Umme Kulsoom R.A. Hence, the Mehr can be fixed according to one’s capacity.

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 977 Category: Social Dealings
مہر کی کم سے کم رقم

السلام علیکم

آج کے دور میں مہر کی کم سے کم رقم کتنی بنتی ہے؟ مجھے بتایا گیا ہے کہ سنت کے مطابق جتنا ممکن ہو اتنا کم ہونا چاہیے اگر دلہا زیادہ مہر کی رقم طے کرنے کا فیصلہ کرتا ہے تو کیا شریعت میں اس کی اجازت ہے ؟ اگر اجازت ہے تو کیا اس کی حد ہے کہ مہر کتنے زیادہ  تک ہوسکتا ہے؟

جزاک اللہ

 الجواب وباللہ التوفیق

مہر مقرر کرنے میں شوہر کی مالی وسعت اور عورت کی خاندانی حیثیت دونوں کالحاظ رکھنا چاہیے نہ اتنا کم  مقرر کریں کہ لڑکی والے خفت محسوس کریں  اور نہ اتنا زیادہ باندھا جائے کہ شوہر کیلئے ادائیگی مشکل ہو۔ مشورہ کے ساتھ مناسب مہر مقرر کرنا چاہیے نبی اکرم ﷺ کی صاحبزادیوں اور اکثر ازواج مطہرات کا مہر  پانچ سو درہم چاندی بتایا جاتا ہے، جس کو آج کل مہر فاطمی کہا جاتا ہے ، اُس کی مقدار موجود وزن کے اعتبار سے تقریباً ایک کیلو پانچ سو اکتیس گرام نوسو ملی گرام چاندی ہوتی ہے، اور کم سے کم مہر کی مقدار دس درہم چاندی ہے۔ موجودہ وزن کے اعتبار سے جس کی مقدار تیس گرام چھ سو اٹھارہ ملی گرام  چاندی ہوتی ہے ۔اگر شوہر کیلئے ادائیگی میں دشواری نہ ہو تو زیادہ مہر بھی باندھا جاسکتا  جیسے حضرت اُم حبیبہؓ کا مہر نجاشی نے حضور پاک ﷺ کی طرف سے چار ہزار درہم ادا کیا تھا اور حضرت اُم کلثوم کا مہر حضرت عمر ؓ نے چالیس ہزار درہم مقرر کیا تھا لہذا اپنی وسعت کے مطابق مہر کو مقرر کیا جاسکتا ہے ۔

واللہ اعلم بالصواب