Wednesday | 19 June 2019 | 15 Shawaal 1440

Fatwa Answer

Question ID: 234 Category: Worship
Imam Standing on Elevated Position While Leading Jama'ah

Assalamo Alaykum Hadhrat, mehrab where the Iamam stands is usually on a platform about 4 to 6 inches higher than the rest of the prayer hall. Most of the times, Imam stands away from the Mehrab and leads the Jama'ah because some people say that leading salah on such a place which is higher than the rest of the area of the mosque is not correct.  Is that true?  

الجواب وباللہ التوفیق

For the Imam to stand on such an elevated place which is less than a hand's height is correct without any karahat (i.e. dislikeness). Any more than this height will be considered makrooh (disliked). 

(مستفاد: فتاوی دارالعلوم ۳؍۳۴۳)

 عن عدي بن ثابت الانصاري: حدثني رجل، أنہ کان مع عمار بن یاسرؓ بالمدائن، فأقیمت الصلاۃ فتقدم عمار وقام علی دکان یصلي والناس أسفل منہ، فتقدم حذیفۃ فأخذ علی یدیہ فاتبعہ عمار حتی أنزلہ حذیفۃ، فلما فرغ عمار من صلاتہ قال لہ حذیفۃ: ألم تسمع رسول الله صلی الله علیہ وسلم، یقول: إذا أم الرجل القوم، فلا یقوم في مکان أرفع من مقامہم، أو نحو ذلک ؟ قال عمار: لذلک اتبعتک حین أخذت علی یدي۔

(سنن أبي داؤد، کتاب الصلاۃ، باب الإمام یقوم مکانا أرفع من مکان القوم، النسخۃ الہندیۃ ۱/۸۸، بیت الأفکار رقم:۵۹۶)

وقدر الارتفاع بذراع ولابأس بما دونہ، وقیل ما یقع بہ الإمتیاز وہو الأ وجہ۔

(در مختار، کتاب الصلاۃ، باب مایفسد الصلاۃ وما یفسد الصلاۃ زکریا ۲/۴۱۵، کراچي ۱/۶۴۶)

وقیل بمقدار الذراع اعتبارا بالسترۃ وعلیہ الاعتماد۔

(عالمگیري، کتاب الصلاۃ، باب مایفسد الصلاۃ، الفصل الثاني فیما یکرہ في الصلاۃ وما لایکرہ، قدیم زکریا ۱/۱۰۸، جدید زکریا دیوبند ۱/۱۶۷)

 فقط واللہ اعلم بالصواب 

Question ID: 234 Category: Worship
امام کا کسی اونچے مقام پر کھڑے رہ کر نماز پڑھانے کا حکم

 

السلام علیکم، ہماری مسجد میں جہاں پر امام صاحب محراب میں امامت کیلئے ٹہرتے ہیں وہ جگہ چار سے چھ انچ اُونچی ہے پوری مسجد سے ۔ امام صاحب اُس محراب پر نہیں ٹہر تے اور دوسری جگہ سے امامت کرتے ہیں کیونکہ بعض لوگوں نے کہا کہ ایسے اونچے جگہ پر ٹہر کر امامت کرنا بدعت ہے ۔ اس مسئلہ پر شریعت کا کیا حکم ہے ؟

 

 

الجواب وباللہ الوفیق

ایک ہاتھ سے کم اونچائی پر کھڑا ہونا امام کے لئے بلاکراہت درست ہے، اس سے زیادہ مکروہ ہے۔(مستفاد: فتاوی دارالعلوم ۳؍۳۴۳)

عن عدي بن ثابت الانصاري: حدثني رجل، أنہ کان مع عمار بن یاسرؓ بالمدائن، فأقیمت الصلاۃ فتقدم عمار وقام علی دکان یصلي والناس أسفل منہ، فتقدم حذیفۃ فأخذ علی یدیہ فاتبعہ عمار حتی أنزلہ حذیفۃ، فلما فرغ عمار من صلاتہ قال لہ حذیفۃ: ألم تسمع رسول الله صلی الله علیہ وسلم، یقول: إذا أم الرجل القوم، فلا یقوم في مکان أرفع من مقامہم، أو نحو ذلک ؟ قال عمار: لذلک اتبعتک حین أخذت علی یدي۔

(سنن أبي داؤد، کتاب الصلاۃ، باب الإمام یقوم مکانا أرفع من مکان القوم، النسخۃ الہندیۃ ۱/۸۸، بیت الأفکار رقم:۵۹۶)

وقدر الارتفاع بذراع ولابأس بما دونہ، وقیل ما یقع بہ الإمتیاز وہو الأ وجہ۔

(در مختار، کتاب الصلاۃ، باب مایفسد الصلاۃ وما یفسد الصلاۃ زکریا ۲/۴۱۵، کراچي ۱/۶۴۶)

وقیل بمقدار الذراع اعتبارا بالسترۃ وعلیہ الاعتماد۔

(عالمگیري، کتاب الصلاۃ، باب مایفسد الصلاۃ، الفصل الثاني فیما یکرہ في الصلاۃ وما لایکرہ، قدیم زکریا ۱/۱۰۸، جدید زکریا دیوبند ۱/۱۶۷)

 فقط واللہ اعلم بالصواب