Sunday | 21 April 2019 | 15 Shabaan 1440

Fatwa Answer

Question ID: 445 Category: Miscellaneous
Three Divorce

Assalamualaikum,

I am a revert to Islam. My wife and I had gotten into a heated argument. Both of us had worked a 14 hour night shift and had not slept in the past 18 or 19 hours, I was suffering from the flu and was taking tamiflu and had taken benadryl and was light headed and had double vision. In the heat of my anger, while being goaded by my also very angry wife, unknowingly I said talak 3 times, just talak and not I give you talak, without any intention of divorce. I know I committed a grave sin and may Allah forgive me. Ameen!

Is our marriage still permissible? Both of us do not want our marriage to end and it was a mistake that was made in the heat of anger.

الجواب وباللہ التوفیق

In the situation inquired about, as you have remembrance of giving Talaaq, therefore, it is the proof of the fact that you were not overpowered by such condition that would have made your brain totally insensitive, therefore, in such a circumstance with giving three Talaaq, three Talaaq will take effect. If you two want to live together then the only way is this that after completing her ‘Iddat of Talaaq, the wife makes Nikah with another man and after establishing matrimonial relationship if that husband gives Talaaq or the second husband passes away then after completing the ‘Iddat you both can have Nikah again.

فالذي ينبغي التعويل عليه في المدهوش ونحوه إناطة الحكم بغلبة الخلل في أقواله وأفعاله الخارجة عن عادته {رد المحتار: مطلب في تعريف السكران وحكمه}

واللہ اعلم بالصواب

 

Question ID: 445 Category: Miscellaneous
طلاقِ ثلاثہ

السلام علیکم

میں دوسرے مذہب سے مسلمان ہوا ہوں ،میرے اور میری بیوی کے درمیان  بہت گرما گرم بحث مباحثہ ہوگیا ہم دونوں چودہ گھنٹوں کی نوکری کرکے آئے تھے اور پچھلے اٹھارہ، انیس گھنٹوں سے نہیں سوئے تھے، مجھے فلو(بخار ) ہورہا تھا اور اس کے لیے ٹیمافلو اور بینٹ بل(دوائیاں) لی ہوئی تھیں اور میرا سر ماؤف ،اڑا ہوا سا ہورہا تھا اور مجھے ہر چیز دو دو نظر آرہی تھیں، اپنے غصے کی بھڑک میں، اور اس وقت میری بیوی وہ بھی بہت غصہ میں تھی، مجھے اکسا ،بھڑکارہی تھی، میں نے نادانستہ  ’’(طلاق)‘‘ تین دفعہ کہہ دیا، صرف طلاق کہا اور یہ نہیں کہا کہ میں تمہیں طلاق دیتا ہوں، اور یہ میں نے بغیر کسی طلاق دینے کی نیت کے کہا میں جانتا ہوں کہ میں نے بہت سنگین گناہ کیا اور اللہ مجھے معاف کرے آمین۔

کیا ہماری شادی ابھی تک جائز ہے؟ہم دونوں اپنی شادی کو ختم کرنا نہیں چاہتے اور ایسا کرنا ایک غلطی تھا جو غصہ کی بھڑک میں ہوئی

الجواب وباللہ التوفیق

صورت مسؤلہ میں چونکہ آپ کو طلاق دینا یاد ہے اس لئے یہ اس بات کی دلیل ہے کہ آپ پر ایسی کیفیت کا غلبہ نہیں تھا کہ جس سے آپ کا دماغ بالکل ماؤف ہوجائے، لہذا  ایسی حالت میں تین طلاق دینے سے تین واقع ہو جائیں گی،اگر آپ دونوں ساتھ رہنا چاہتے  ہیں  تو صرف یہی صورت ہے کہ طلاق کی عدت پوری ہونے کے بعد  بیوی دوسرے شخص سے نکاح کرے اور تعلق زوجیت کے بعد اگر وہ دوسرا شوہر طلاق دےیا   دوسرے شوہر کا انتقال ہو جائے تو عدت کے بعد دوبارہ آپ دونوں نکاح کرسکتے ہیں ۔

فالذي ينبغي التعويل عليه في المدهوش ونحوه إناطة الحكم بغلبة الخلل في أقواله وأفعاله الخارجة عن عادته {رد المحتار: مطلب في تعريف السكران وحكمه}

واللہ اعلم بالصواب