Monday | 03 August 2020 | 13 Dhul-Hajj 1441
Gold NisabSilver NisabMahr Fatimi
$5559.47$478.8$1197

Fatwa Answer

Question ID: 515 Category: Permissible and Impermissible
Video Bayanaat

 

Assalamualikum,

Mera sawal ye hy ki video lecture k zariye bayanat karna sunna .Is talluq se hamare ulama ka (Ahle deoband ) ka kya fatwa hy.  kahan tak ijazat hy.Fatwa malum ho tha k ulama k barey me dil me burayi na aye. Kyun hamarey bade akabir ulama jysa k mufti Taqi Sab Db bhi video lecturesdete hain... Is barey me wazahat dein meherbani..Shukriy

 

 الجواب وباللہ التوفیق

There is a difference of opinion about digital pictures among some eminent Ulama as you have mentioned in your question. In their view there is room for the permissibility per need in present day circumstances and needs. But the point of view of almost all Darul Ifta and the majority of Ulama of the Sub Continent is the same that the picture, no matter it is by a digital camera, Shara’n it is under the ruling of picture, neither taking picture is permissible nor making video. As far as watching and listening to the video Bayanaat, it is not without Karaahiyat, hence one should listen to the audio Bayanaat.

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 515 Category: Permissible and Impermissible
علماء کی تصاویر اورویڈیو

میرا سوال یہ ہے کہ ہمارے اہلِ دیوبند علماء کرام کا ویڈیو کے ذریعے لیکچر؍ بیانات کرنے ؍سننے کے بارے میں کیا فتویٰ ہے؟ کہاں تک اجازت ہے؟ فتویٰ معلوم ہوجائے تاکہ علماء کے بارے میں دل میں برائی نہ آئے کہ  کیوں کہ ہمارے بڑے اکابر علماء جیسے مفتی تقی عثمانی دامت برکاتہ بھی ویڈیو لیکچر دیتے ہیں، برائے مہربانی اس بارے میں وضاحت کریں۔ شکریہ

الجواب وباللہ التوفیق

ڈیجیٹل تصویر سے متعلق  بعض اکابر علماء کا اختلاف ہے،جیساکہ آپ نے سوال میں ذکر کیا ہے، ان کے نزدیک موجودہ حالات اور ضرورت کی بنیاد پر بقدر ضرورت اس کی گنجائش ہے،لیکن بر صغیر کےتقریباً دار الافتاء  اور جمہور علماء کا موقف یہی ہے کہ تصویر خواہ ڈیجیٹل کیمرہ کے ذریعہ سے ہی  کیوں نہ ہو وہ شرعاً تصویر کے حکم میں ہے،نہ تصویر لینا جائز ہے اور نہ ویڈیو کی اجازت ہے۔ رہا ویڈیو بیانات کادیکھنا اور سننا تویہ کراہت سے خالی نہیں،اس لئے آڈیو بیانات سننے کا اہتمام کرنا چاہیے۔

واللہ اعلم بالصواب