Monday | 21 September 2020 | 3 Safar 1442
Gold NisabSilver NisabMahr Fatimi
$5481.28$526.05$1315.12

Fatwa Answer

Question ID: 532 Category: Beliefs
Did Musa عليه السلام really ask Allah these questions?

Assalamualaikum,

Once Musa عليه السلام asked Allah عزّ و جل: Oh Allah! What do you do when you’re happy? Allah ta’ala said: when I am happy, I make it rain. Musa عليه السلام asked again: when you are much more happier then? Allah عزّ و جل said: I send guests. Musa عليه السلام then asked: “what do you do when you are the most happiest?” Allah عزّ و جل said: I create daughters.” 

I haven’t found any authentic source for this. Please shed some light.

JazakAllah

الجواب وباللہ التوفیق

We have not seen the Hadith mentioned in the question, however, there is a narration about first part of the question which is as under:

عن عمر بن الخطاب قال : حدثت أن موسى أو عيسى عليهما السلام قال : يا رب ما علامة رضاك عن خلقك ؟ فقال عز و جل :  أن أنزل عليهم الغيث إبان زرعهم و أحسبه إبان حصادهم و أجعل أمورهم إلى حلمائهم و فيهئهم في أيدي سمحائهم  قال : يا رب فما علامة السخط ؟  قال :  أن أنزل عليهم الغيث إبان حصادهم و أحبسه إبان زرعهم و أجعل أمورهم إلى سفائهم و فيئهم في أيدي بخلائهم(شعب الایمان :۷۳۹۲)

Translation: Hazrat U’mar R.A. says that I have been told that Moosa A.S. or Esa A.S. said, O’ my Rabb! What is the sign of your pleasure? Allaah T’aalaa said: (The sign of my pleasure is that) I send rain at the time of the growing of crops and I stop it at the time of its harvest, and I entrust their affairs (rule) to their wise ones and their wealth to the generous people. He A.S. then asked, O’ my Rabb! What is the sign of your displeasure? Allaah T’aalaa said, I send rain at the time of the cutting of crops and I stop it at the time of its growing, and I entrust their affairs (rule) to their stupid and less-competent ones and their wealth to the miser people.  

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 532 Category: Beliefs
حق تعالیٰ کے مخلوق سےراضی ہونے کی علامتوں والی روایت کی تحقیق

 ایک دفعہ موسیٰ علیہ السلام نے اللہ عزوجل سے پوچھا اے اللہ جب آپ خوش ہوتے ہیں تو آپ کیا کرتے ہیں ؟ اللہ تعالیٰ نے کہا: جب میں خوش ہوتا ہوں تو میں بارش کرتا ہوں۔ موسیٰ علیہ السلام نے پھر پوچھا: جب آپ زیادہ خوش ہوتے ہیں پھر؟ اللہ عزوجل نے کہا: میں مہمان بھیجتا ہوں، پھر موسیٰ علیہ السلام نے پوچھا: جب آپ بہت زیادہ خوش ہوتے ہیں تو پھر کیا کرتے ہیں، اللہ عزوجل نے کہا: میں بیٹیاں پیدا کرتا ہوں، مجھے اس حدیث کا کوئی مستند ذریعہ  نہیں ملا ہے ، برائے مہربانی اس پر روشنی ڈالیے۔

جزاک اللہ 

 

الجواب وباللہ التوفیق

سوال میں مذکور حدیث تونظر سے نہیں گزری۔البتہ سوال کے پہلے جزء سے متعلق  روایت موجود  ہے جو درج ذیل ہے:

عن عمر بن الخطاب قال : حدثت أن موسى أو عيسى عليهما السلام قال : يا رب ما علامة رضاك عن خلقك ؟ فقال عز و جل :  أن أنزل عليهم الغيث إبان زرعهم و أحسبه إبان حصادهم و أجعل أمورهم إلى حلمائهم و فيهئهم في أيدي سمحائهم  قال : يا رب فما علامة السخط ؟  قال :  أن أنزل عليهم الغيث إبان حصادهم و أحبسه إبان زرعهم و أجعل أمورهم إلى سفائهم و فيئهم في أيدي بخلائهم(شعب الایمان :۷۳۹۲)

حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ مجھے یہ بتایا گیا کہ موسیٰ (علیہ السلام) یا عیسیٰ (علیہ السلام) نے فرمایا اے میرے رب! آپ کی رضا مندی کی کیا علامت ہے ؟حق تعالیٰ نے فرمایا: (میری رضامندی کی علامت یہ ہےکہ ) میں ان پر بارش نازل کرتا ہوں کھیتی کے اگنے کے وقت اور اس کو روک لیتاہوں اس کے کاٹنے کے وقت، اور میں ان کے معاملات (حکومت )ان کے عقلمندوں کے سپرد کرتا ہوں اور ان کے مال  غنیمت سخی لوگوں کے ہاتھوں میں دیتا ہوں۔ پھر عرض کیا اے میرے رب آپ کی  ناراضگی کی علامت کیا ہے ؟ فرمایاکہ  میں ان پر بارش نازل کرتاہوں فصل کی کٹائی کے وقت اور اس کو روک لیتاہوں اس کے اگنے کےوقت، اور ان کے امور (حکومت ) بیوقوفوں اور کم عقلوں کے حوالے کرتا ہوں ،اور ان کے مالِ غنیمت ان کے بخیلوں کے سپرد کرتا ہوں۔

واﷲ اعلم بالصواب