Monday | 24 February 2020 | 30 Jamadiul-Thani 1441
Gold NisabSilver NisabMahr Fatimi
$4667.06$366.19$915.47

Fatwa Answer

Question ID: 535 Category: Worship
Was my Fajr valid?

Assalamualaikum, 

I have two questions: 

  1. Will my prayer be valid if the sun rises while I am praying fajr?
  2. It is narrated in a hadeeth more or less of Abu Hurayrah (may Allaah be pleased with him) that the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) said: “Allaah likes the act of sneezing and dislikes the act of yawning, so if any one of you sneezes and praises Allaah (says “al-hamdu Lillaah”), it is a duty on every Muslim who hears him to say to him, “Yarhamuk Allaah (may Allaah have mercy on you).” As for yawning, it is from the Shaytaan, so if any of you feels the urge to yawn, he should suppress it as much as he can, for when any one of you yawns, the Shaytaan laughs at him.”

    (Reported by al-Bukhaari, 10/505)

    This is a weird question but I’m curious to know that since Allah likes the act of sneezing and we should praise him for it, does it mean anything in Islamic terms if you get a sneezing sensation but don’t sneeze 

الجواب وباللہ التوفیق

While praying Fajr Salat if the sun rises before making the Salam then that Salat will become null and void, later on it must be repeated.

عن عقبۃ بن عامر الجہني رضي اللہ عنہ یقول: کان رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نہانا أن نصلي حین تطلع الشمس بازغۃ حتی ترتفع۔ (صحیح مسلم، الصلاۃ / باب الأوقات التي نہی عن الصلاۃ فیہا ۱؍۲۷۶ رقم: ۸۳۱)

قولہ: بخلاف الفجر أي فإنہ لا یؤدي فجر یومہ وقت الطلوع لأن وقت الفجر کلہا کامل فوجبت کاملۃ فتبطل بطرو الطلوع الذي ہو وقت الفساد۔ (شامي ۱؍۳۷۳)

ولا یتصور أداء الفجر مع طلوع الشمس عندنا، حتی لو طلعت الشمس وہو في خلال الصلاۃ تفسد صلاتہ عندنا۔(بدائع الصنائع، ۱؍۳۲۹)

If the sneeze stops coming then the command to say Alhamdulillah after sneezing will not be applicable.

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 535 Category: Worship
دوران فجر سورج طلاع ہوجائے

میرے دو سوال ہیں:

(۱)کیا میری نماز ہوجائے گی اگر فجر پڑھنے کے دوران سورج نکل آئے؟

(۲)حدیث مبارک میں کم و بیش مفہوم آتا ہے کہ ابوہریرہؓ  نقل کرتے ہیں کہ  نبی ﷺ نے فرمایا: ’’اللہ چھینکنے کے عمل کو پسند  کرتے ہیں اور جمائی کے عمل کو ناپسند کرتے ہیں، پس اگر تم میں سے کوئی چھینکنے اور اللہ کی تعریف کرے(الحمد للہ کہے) یہ ہر مسلمان کے ذمہ ہے جو اسے یہ کہتے ہوئے سنے کہ وہ اسے یرحمک اللہ کہے، جمائی شیطان سے ہے،  پس اگر تم میں سے کوئی جمائی لینے کی ضرورت  محسوس کرے تو اسے چاہیے کہ وہ اسے دبائے جہاں تک ممکن ہوسکے کیونکہ جب تم میں سے کوئی جمائی لینا  ہے تو شیطان اس پر ہنستا ہے‘‘ (البخاری: ۱۰؍ ۵۰۵)

سوال: جیسا کہ اللہ چھینک کو پسند کرتے ہیں اور ہمیں چھینک آنے پر اللہ کی تعریف کرنی چاہیے؟ اگر ہمیں چھینک آتی محسوس  ہو اور ہم نہ چھینکیں  تو اسلامی طور پر کیا ہوگا؟

 

الجواب وباللّٰہ التوفیق

(۱) نماز فجر کے دوران اگر سلام پھیرنے سے قبل سورج نکل آیا تو وہ نماز باطل ہوجائے گی، بعد میں اس کی قضا لازم ہوگی۔(۲) اگر چھینک آتے آتے رک جائے تو چھینکنے کے بعدالحمد للہ کہنےکا جو حکم ہے وہ نہیں رہے گا۔

عن عقبۃ بن عامر الجہني رضي اللہ عنہ یقول: کان رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نہانا أن نصلي حین تطلع الشمس بازغۃ حتی ترتفع۔ (صحیح مسلم، الصلاۃ / باب الأوقات التي نہی عن الصلاۃ فیہا ۱؍۲۷۶ رقم: ۸۳۱)

قولہ: بخلاف الفجر أي فإنہ لا یؤدي فجر یومہ وقت الطلوع لأن وقت الفجر کلہا کامل فوجبت کاملۃ فتبطل بطرو الطلوع الذي ہو وقت الفساد۔ (شامي ۱؍۳۷۳)

ولا یتصور أداء الفجر مع طلوع الشمس عندنا، حتی لو طلعت الشمس وہو في خلال الصلاۃ تفسد صلاتہ عندنا۔(بدائع الصنائع، ۱؍۳۲۹)

واﷲ اعلم بالصواب